اک قیامت مری حیات بنی

0
65

اک قیامت مری حیات بنی
گرمئی بزم کائنات بنی
آشناۓ سکوں تھی لا علمی
آگہی فکر شش جہات بنی
موت نے جب فنا کی دی تعلیم
وہ گھڑی مژدہ حیات بنی
موسم برشگال خوب آیا
اک دلہن ساری کائنات بنی
دامن ضبط میں سکوں پایا
شور و شیوں سے جب نہ بات بنی
پھر وہی رات صبح بنتی ہے
جو سحر شام ہو کے رات بنی
جبر کا سب طلسم ٹوٹ گیا
جب ارادوں کی کائنات بنی
کس زمیں میں غزل کہی ہے ضیاء
کہ بناے سے بھی نہ بات بنی

Rate this post
Previous articleازتیراب
Next articleامید

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here