تماشا ہے سب کچھ ، مگر کچھ نہیں

0
66

تماشا ہے سب کچھ ، مگر کچھ نہیں
سواۓ فریب نظر کچھ نہیں
زمانہ یہ ہے رقص ذرّات کا
حکایات شمس و قمر کچھ نہیں
ستاروں سے آگے مری منزلیں
بلا سے اگر بال و پر کچھ نہیں
محبّت کی یہ محویت، کیا کہوں
وہ آے تو اپنی خبر کچھ نہیں
مرا شوق منزل ہے شابت قدم
کوئی رہزن و راہبر کچھ نہیں
محبّت ہے انسان کی آبرو
بغیر محبّت بشر کچھ نہیں
ضیاء تو مریض غم عشق ہے
علاج اس کا اے چارہ گر کچھ نہیں

Rate this post
Previous articleتم نے کیوں دیکھا مری جانب نگاہ ناز سے
Next articleجدائی

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here