دنیا مری نظر سے تجھے دیکھتی رہی

0
48

دنیا مری نظر سے تجھے دیکھتی رہی
پھر میرے دیکھنے میں بتا کیا کمی رہی
کیا غم اگر قرار و سکوں کی کمی رہی
خوش ہوں کہ کامیاب مری زندگی رہی
اک درد تھا جگر میں جو اٹھتا رہا مدام
اک آگ تھی کہ دل میں برابر لگی رہی
دامن دریدہ، لب پہ فگاں، آنکھ خونچکاں
گر کر تری نظر سے مری بے کسی رہی
آئی بہار، جام چلے، مے لوٹی مگر
جو تشنگی تھی مجھ کو وہی تشنگی رہی
کھوئی ہوئی تھی تیری تجلّی میں کائنات
پھر بھی مری نگاہ تجھے ڈھونڈتی رہی
جلتی رہیں امید کی شمعیں تمام رات
مایوس دل میں کچھ تو ضیاء روشنی رہی

Rate this post
Previous articleدل
Next articleسوچ کا سفر

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here