شاعر سجدے میں

0
56

اے زمیں، اے آسماں، اے زندگی، اے کائنات
اے ہوا، اے موج دریا، اے نشاط بے شبات
اے پہاڑوں کی بلندی، اے سرود آبشار
اے گھٹا جھومی ہوئی، اے نغمہ برلب جوئبار
اے مسرّت خیز وادی، اے فضاۓ کیف ریز
اے دل آباد وحشت، اے رگوں کے خون تیز
اے بساط ریگ صحرا، بےکس و بے خانماں!
اے بگولوں کے مسلسل رقص، اے سیل رواں
اے سمندر ہر طرف آغوش پھیلاۓ ہوئے!
اے حوادش کے تھپیڑے روز و شب کھاۓ ہوئے
اے بہار صحن گلشن، اے نظام رنگ و بو
اے گلوں کی سادگی، اے بلبلوں کی آرزو
اے پھلوں کے بوجھ سے سربر زمیں شاخ شجر
اے پریشاں زلف سمبل، چشم نرگس بے بصر
اے عروس صبح مستی شام بزم مے کدہ
اے جوانی کی نظر، دزدیدہ و ہوش آزما
اے ستاروں کی چمک، اے گردش خورشید و ماہ
اے سرور بے گناہی، اے تقازاۓ گناہ
اے دل بے تاب، اے موہوم امید سکوں
اے سکوت یاس، اے طوفان امواج جنوں
اے وقار حسن، بزم زیست پر چھاۓ ہوئے
اے جنون عشق، سرد آہوں سے گرماۓ ہوئے
اے نگاہ مست و بیخود، مائل تخریب ہوش!
اے نیاز میکشان زیست، ناز مے فروش
اے چراغ آرزو، اے بزم ہستی کے شباب
اے پر پروانہ، اے رقص نشاط کامیاب
اے حرم، اے دیر، اے مذہب کے انداز حسیں
اے تخیل کی بلندی کے فریب بہتریں
اے فلک پر اڑنے والے طائران خوش جمال
اے زمیں پر رینگنے والے وجود بے مقال
اے قفس میں پلنے والے، بے زبان و بے اماں
اے اسیران محن، مفلس، غریب و ناتواں
اے غم ایّام، اے فکر حصول روزگار!
اے خیابان عمل، اے بازوے مصروف کار
اے خمار بادۂ دولت میں بے ہوش و حواس
اے کہ تم سے ذرّہ ذرّہ زندگی کا ہے اداس!
بے نیاز مستی و جام و سبو کر دو مجھے
اپنے کیف مستقل سے اس طرح بھر دو مجھے
میں تمہارا بن کے سوز و جذب کا ماہر بنوں
دل سے وہ نغمے اٹھیں، جنکے لئے شاعر بنوں

Rate this post
Previous articleشادی
Next articleشب و روز رونے سے کیا فائدہ ہے

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here