یاد

0
43

وہ نغمے، وہ مناظر، وہ بہاریں یاد ہیں مجھ کو
یہی وہ نقش ہیں جو مٹ نہیں سکتے مٹانے سے
وہ راتیں اور وہ ساون کی پھواریں یاد ہیں مجھ کو
یہی افسانے اکثر کہتا رہتا ہوں زمانے سے
وہ تیرا مسکرا کر چاند کو تابندگی دینا
شراب عشق سے مخمور ہو جانا فضاؤں کا
وہ تیری مست آنکھوں کا نوید زندگی دینا
وہ اکثر کھیلنا زلف پریشاں سے ہواؤں کا
مرا دل ہو گیا ہے گردش ایّام سے واقف
بلند و پست عالم پھر رہے ہیں میری آنکھوں میں
مزاق دل بری ہے عشق کے پیغام سے واقف
تصور ہے مرا کھویا ہوا سا تیری آنکھوں میں
تو مجھ سے دور ہے لیکن تجھے میں یاد کرتا ہوں
نہ جب فریاد کرتا تھا، نہ اب فریاد کرتا ہوں

Rate this post
Previous articleنیا سال
Next articleA Strange Kind Of Madness Has Charmed My World

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here